دیکھی جو زلف یار طبیعت سنبھل گئی

مرزارضا برق ؔ

دیکھی جو زلف یار طبیعت سنبھل گئی

مرزارضا برق ؔ

MORE BYمرزارضا برق ؔ

    دیکھی جو زلف یار طبیعت سنبھل گئی

    آئی ہوئی بلا مرے سر پر سے ٹل گئی

    پوچھا اگر کسی نے مرا آ کے حال دل

    بے اختیار آہ لبوں سے نکل گئی

    عریاں حرارت تپ فرقت سے میں رہا

    ہر بار میرے جسم کی پوشاک جل گئی

    کیفیت بہار جو یاد آئی زیر خاک

    داغ جنوں سے اپنی طبیعت بہل گئی

    اس کے دہان تنگ کی تنگی نہ پوچھئے

    اعجاز سمجھے بات جو منہ سے نکل گئی

    فرقت میں ہم بغل جو ہوا برقؔ گور سے

    حسرت وصال یار کی دل سے نکل گئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY