دیکھنا ہر صبح تجھ رخسار کا

ولی محمد ولی

دیکھنا ہر صبح تجھ رخسار کا

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    دیکھنا ہر صبح تجھ رخسار کا

    ہے مطالعہ مطلع انوار کا

    بلبل و پروانہ کرنا دل کے تئیں

    کام ہے تجھ چہرۂ گل نار کا

    صبح تیرا درس پایا تھا صنم

    شوق دل محتاج ہے تکرار کا

    ماہ کے سینے اپر اے شمع رو

    داغ ہے تجھ حسن کی جھلکار کا

    دل کوں دیتا ہے ہمارے پیچ و تاب

    پیچ تیرے طرۂ طرار کا

    جو سنیا تیرے دہن سوں یک بچن

    بھید پایا نسخۂ اسرار کا

    چاہتا ہے اس جہاں میں گر بہشت

    جا تماشا دیکھ اس رخسار کا

    آرسی کے ہاتھ سوں ڈرتا ہے خط

    چور کوں ہے خوف چوکیدار کا

    سرکشی آتش مزاجی ہے سبب

    ناصحوں کو گرمئ بازار کا

    اے ولیؔ کیوں سن سکے ناصح کی بات

    جو دوانا ہے پری رخسار کا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    دیکھنا ہر صبح تجھ رخسار کا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY