دیکھتا تھا میں پلٹ کر ہر آن

راجیندر منچندا بانی

دیکھتا تھا میں پلٹ کر ہر آن

راجیندر منچندا بانی

MORE BYراجیندر منچندا بانی

    دیکھتا تھا میں پلٹ کر ہر آن

    کس صدا کا تھا نہ جانے امکان

    اس کی اک بات کو تنہا مت کر

    وہ کہ ہے ربط نوا میں گنجان

    ٹوٹی بکھری کوئی شے تھی ایسی

    جس نے قائم کی ہماری پہچان

    لوگ منزل پہ تھے ہم سے پہلے

    تھا کوئی راستہ شاید آسان

    سب سے کمزور اکیلے ہم تھے

    ہم پہ تھے شہر کے سارے بہتان

    اوس سے پیاس کہاں بجھتی ہے

    موسلا دھار برس میری جان

    کیا عجب شہر غزل ہے بانیؔ

    لفظ شیطان سخن بے ایمان

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-bani (Pg. 193)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY