دیر تک چند مختصر باتیں

عاصم واسطی

دیر تک چند مختصر باتیں

عاصم واسطی

MORE BYعاصم واسطی

    دیر تک چند مختصر باتیں

    اس سے کیں میں نے آنکھ بھر باتیں

    تو مرے پاس جب نہیں ہوتا

    تجھ سے کرتا ہوں کس قدر باتیں

    کیسی بیچارگی سے کرتے ہیں

    بے اثر لوگ با اثر باتیں

    دیکھ بچوں سے گفتگو کر کے

    کیسی ہوتیں ہیں بے ضرر باتیں

    سن کبھی بے خودی میں کرتے ہیں

    بے خبر لوگ با خبر باتیں

    اس کی عادت ہے بات کرنے کی

    وہ کرے گا ادھر ادھر باتیں

    انتہائی حسین لگتی ہے

    جب وہ کرتی ہے روٹھ کر باتیں

    آ مجھے سن کہ ہو تجھے معلوم

    کیسی ہوتی ہیں خوب تر باتیں

    سہل کٹ جائے یہ طویل سفر

    اور کر میرے ہم سفر باتیں

    کوئی سنتا نہ ہو کہیں عاصمؔ

    یوں نہ کر اس سے فون پر باتیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دیر تک چند مختصر باتیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY