دیر تک میں تجھے دیکھتا بھی رہا

رئیس فروغ

دیر تک میں تجھے دیکھتا بھی رہا

رئیس فروغ

MORE BY رئیس فروغ

    دیر تک میں تجھے دیکھتا بھی رہا

    ساتھ اک سوچ کا سلسلہ بھی رہا

    میں تو جلتا رہا پر مری آگ میں

    ایک شعلہ ترے نام کا بھی رہا

    شہر میں سب سے چھوٹا تھا جو آدمی

    اپنی تنہائیوں میں خدا بھی رہا

    زندگی یاد رکھنا کہ دو چار دن

    میں ترے واسطے مسئلہ بھی رہا

    رنگ ہی رنگ تھا شہر جاں کا سفر

    راہ میں جسم کا حادثہ بھی رہا

    تم سے جب گفتگو تھی تو اک ہم سخن

    کوئی جیسے تمہارے سوا بھی رہا

    وہ مرا ہم نشیں ہم نوا ہم نفس

    بھونکتا بھی رہا کاٹتا بھی رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY