ڈھب دیکھے تو ہم نے جانا دل میں دھن بھی سمائی ہے

میراجی

ڈھب دیکھے تو ہم نے جانا دل میں دھن بھی سمائی ہے

میراجی

MORE BYمیراجی

    ڈھب دیکھے تو ہم نے جانا دل میں دھن بھی سمائی ہے

    میراجیؔ دانا تو نہیں ہے عاشق ہے سودائی ہے

    صبح سویرے کون سی صورت پھلواری میں آئی ہے

    ڈالی ڈالی جھوم اٹھی ہے کلی کلی لہرائی ہے

    جانی پہچانی صورت کو اب تو آنکھیں ترسیں گی

    نئے شہر میں جیون دیوی نیا روپ بھر لائی ہے

    ایک کھلونا ٹوٹ گیا تو اور کئی مل جائیں گے

    بالک یہ انہونی تجھ کو کس بیری نے سجھائی ہے

    دھیان کی دھن ہے امر گیت پہچان لیا تو بولے گا

    جس نے راہ سے بھٹکایا تھا وہی راہ پر لائی ہے

    بیٹھے ہیں پھلواری میں دیکھیں کب کلیاں کھلتی ہیں

    بھنور بھاؤ تو نہیں ہے کس نے اتنی راہ دکھائی ہے

    جب دل گھبرا جاتا ہے تو آپ ہی آپ بہلتا ہے

    پریم کی ریت اسے جانو پر ہونی کی چترائی ہے

    امیدیں ارمان سبھی جل دے جائیں گے جانتے تھے

    جان جان کے دھوکے کھائے جان کے بات بڑھائی ہے

    اپنا رنگ بھلا لگتا ہے کلیاں چٹکیں پھول بنیں

    پھول پھول یہ جھوم کے بولا کلیو تم کو بدھائی ہے

    آبشار کے رنگ تو دیکھے لگن منڈل کیوں یاد نہیں

    کس کا بیاہ رچا ہے دیکھو ڈھولک ہے شہنائی ہے

    ایسے ڈولے من کا بجرا جیسے نین بیچ ہو کجرا

    دل کے اندر دھوم مچی ہے جگ میں اداسی چھائی ہے

    لہروں سے لہریں ملتی ہیں ساگر امڈا آتا ہے

    منجدھار میں بسنے والے نے ساحل پر جوت جگائی ہے

    آخری بات سنائے کوئی آخری بات سنیں کیوں ہم نے

    اس دنیا میں سب سے پہلے آخری بات سنائی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے