دھرتی سے دور ہیں نہ قریب آسماں سے ہم

رؤف خیر

دھرتی سے دور ہیں نہ قریب آسماں سے ہم

رؤف خیر

MORE BYرؤف خیر

    دھرتی سے دور ہیں نہ قریب آسماں سے ہم

    کوفے کا حال دیکھ رہے ہیں جہاں سے ہم

    ہندوستان ہم سے ہے یہ بھی درست ہے

    یہ بھی غلط نہیں کہ ہیں ہندوستاں سے ہم

    رکھا ہے بے نیاز اسی بے نیاز نے

    وابستہ ہی نہیں ہیں کسی آستاں سے ہم

    رکھتا نہیں ہے کوئی شہادت کا حوصلہ

    اس کے خلاف لائیں گواہی کہاں سے ہم

    محفل میں اس نے ہاتھ پکڑ کر بٹھا لیا

    اٹھنے لگے تھے ایک ذرا درمیاں سے ہم

    حد جس جگہ ہو ختم حریفان خیرؔ کی

    واللہ شروع ہوتے ہیں اکثر وہاں سے ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY