دید دنیا حباب کی سی ہے

معروف دہلوی

دید دنیا حباب کی سی ہے

معروف دہلوی

MORE BYمعروف دہلوی

    دید دنیا حباب کی سی ہے

    اس کی تعبیر خواب کی سی ہے

    ساقیا مے کہاں ہے شیشے میں

    روشنی آفتاب کی سی ہے

    پیرہن میں نمود تن سے ترے

    ہلکی ایک تہ شہاب کی سی ہے

    کس کا وصف دہن کیا تھا کہ آج

    منہ میں خوشبو گلاب کی سی ہے

    حالت اب دل کی ہجر میں معروفؔ

    ایک شہر خراب کی سی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY