دیپ سے دیپ جلاؤ تو کوئی بات بنے

رشید قیصرانی

دیپ سے دیپ جلاؤ تو کوئی بات بنے

رشید قیصرانی

MORE BYرشید قیصرانی

    دیپ سے دیپ جلاؤ تو کوئی بات بنے

    گیت پر گیت سناؤ تو کوئی بات بنے

    قطرہ قطرہ نہ پکارو مجھے بہتی ندیوں

    موج در موج بلاؤ تو کوئی بات بنے

    رات اندھی ہے گزر جائے گی چپکے چپکے

    جال کرنوں کا بچھاؤ تو کوئی بات بنے

    سامنے اپنے ہی خاموش کھڑا ہوں کب سے

    درمیاں تم بھی جو آؤ تو کوئی بات بنے

    داستاں چاند ستاروں کی سنانے والو

    تم مرا کھوج لگاؤ تو کوئی بات بنے

    منتظر میں تو بہ ہر گام ہوں ساحل کی طرح

    صورت موج تم آؤ تو کوئی بات بنے

    جھانکتا کون ہے اب دل کے شگافوں میں رشیدؔ

    زخم چہرے پہ سجاؤ تو کوئی بات بنے

    مأخذ :
    • کتاب : Fasiil-e-lab (Pg. 64)
    • Author : Rashiid Qaisarani
    • مطبع : Aiwan-e-urdu Taimuriya karachi (1973)
    • اشاعت : 1973

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY