دیوانے اتنے جمع ہوئے شہر بن گیا

فضیل جعفری

دیوانے اتنے جمع ہوئے شہر بن گیا

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    دیوانے اتنے جمع ہوئے شہر بن گیا

    جنگل کے حق میں جوش جنوں زہر بن گیا

    اچٹی جو نیند دل کا ہر اک زخم جاگ اٹھا

    یادوں کا چاند پچھلے پہر قہر بن گیا

    یہ زیست ہے فضیلؔ کہ دریائے درد ہے

    ہر لمحہ غم کی امڈی ہوئی لہر بن گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY