دل آتش ہجراں سے جلانا نہیں اچھا

بھارتیندو ہریش چندر

دل آتش ہجراں سے جلانا نہیں اچھا

بھارتیندو ہریش چندر

MORE BYبھارتیندو ہریش چندر

    دل آتش ہجراں سے جلانا نہیں اچھا

    اے شعلہ رخو آگ لگانا نہیں اچھا

    کس گل کے تصور میں ہے اے لالہ جگر خوں

    یہ داغ کلیجے پہ اٹھانا نہیں اچھا

    آیا ہے عیادت کو مسیحا سر بالیں

    اے مرگ ٹھہر جا ابھی آنا نہیں اچھا

    سونے دے شب وصل غریباں ہے ابھی سے

    اے مرغ سحر شور مچانا نہیں اچھا

    تم جاتے ہو کیا جان مری جاتی ہے صاحب

    اے جان جہاں آپ کا جانا نہیں اچھا

    آ جا شب فرقت میں قسم تم کو خدا کی

    اے موت بس اب دیر لگانا نہیں اچھا

    پہنچا دے صبا کوچۂ جاناں میں پس مرگ

    جنگل میں مری خاک اڑانا نہیں اچھا

    آ جائے نہ دل آپ کا بھی اور کسی پر

    دیکھو مری جاں آنکھ لڑانا نہیں اچھا

    کر دوں گا ابھی حشر بپا دیکھیو جلاد

    دھبا یہ مرے خوں کا چھڑانا نہیں اچھا

    اے فاختہ اس سرو سہی قد کا ہوں شیدا

    کو کو کی صدا مجھ کو سنانا نہیں اچھا

    مآخذ:

    • کتاب : Bhartendu Samagr (Pg. 271)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY