دل اب اس دل شکن کے پاس کہاں

بیاں احسن اللہ خان

دل اب اس دل شکن کے پاس کہاں

بیاں احسن اللہ خان

MORE BYبیاں احسن اللہ خان

    دل اب اس دل شکن کے پاس کہاں

    چیل کے گھونسلے میں ماس کہاں

    صبر بیمار عشق کی ہے دوا

    پر طبیعت سے میری راس کہاں

    صبح آنے کا اس کے وعدہ ہے

    مجھ کو پر رات بھر کی آس کہاں

    دشمن جاں کو دوست سمجھا میں

    وہ کہاں میں کہاں قیاس کہاں

    کیا ہوا اس کو دیکھتے ہی بیاںؔ

    ہوش کیدھر گئے حواس کہاں

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    دل اب اس دل شکن کے پاس کہاں فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY