دل اگر کچھ مانگ لینے کی اجازت مانگتا

پیرزادہ قاسم

دل اگر کچھ مانگ لینے کی اجازت مانگتا

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    دل اگر کچھ مانگ لینے کی اجازت مانگتا

    یہ محبت زاد تجدید محبت مانگتا

    وقت خود ناپائیداری کے لئے مشہور ہے

    ایسے بے توفیق سے میں خاک شہرت مانگتا

    میں نے صحرا سے تحیر خیز حیرت مانگ لی

    خاک ہو جاتا اگر تہذیب وحشت مانگتا

    دل کو خوش آئی نہیں یہ دولت آسودگی

    اور کچھ مل جاتی تو یہ کچھ اور زحمت مانگتا

    ہیں خداوندان دنیا ہم تہی دستوں سے ہیچ

    دل کو حسرت تھی تو ہم جیسوں سے خلعت مانگتا

    ہو گیا ہوتا گراں گوشوں سے گر مغلوب میں

    کیوں سخن آغاز کرتا کیوں سماعت مانگتا

    کیا تعجب تھا کہ اس سوداگری کے دور میں

    خواب بھی تعبیر ہو جانے کی قیمت مانگتا

    RECITATIONS

    پیرزادہ قاسم

    پیرزادہ قاسم

    پیرزادہ قاسم

    دل اگر کچھ مانگ لینے کی اجازت مانگتا پیرزادہ قاسم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY