دل دے رہا تھا جو اسے بے دل بنا دیا

آرزو لکھنوی

دل دے رہا تھا جو اسے بے دل بنا دیا

آرزو لکھنوی

MORE BYآرزو لکھنوی

    دل دے رہا تھا جو اسے بے دل بنا دیا

    آسان کام آپ نے مشکل بنا دیا

    ہر سانس ایک شعلہ ہے ہر شعلہ ایک برق

    کیا تو نے مجھ کو اے تپش دل بنا دیا

    اس حسن ظن پہ ہم سفروں کے ہوں پا بہ گل

    مجھ بے خبر کو رہبر منزل بنا دیا

    اندھا ہے شوق پھر نظر امکان پر ہو کیوں

    کام اپنا دل نے آپ ہی مشکل بنا دیا

    دوڑا لہو رگوں میں بندھی زندگی کی آس

    یہ بھی برا نہیں ہے جو بسمل بنا دیا

    غرق و عبور دونوں کا حاصل ہے ختم کار

    مجبوریوں نے موج کو ساحل بنا دیا

    اس شان عاجزی کے فدا جس نے آرزوؔ

    ہر ناز ہر غرور کے قابل بنا دیا

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 37)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY