دل مہجور کو تسکین کا ساماں نہ ملا

اختر شیرانی

دل مہجور کو تسکین کا ساماں نہ ملا

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    دل مہجور کو تسکین کا ساماں نہ ملا

    شہر جاناں میں ہمیں مسکن جاناں نہ ملا

    کوچہ گردی میں کٹیں شوق کی کتنی راتیں

    پھر بھی اس شمع تمنا کا شبستاں نہ ملا

    پوچھتے منزل سلمیٰ کی خبر ہم جس سے

    وادیٔ نجد میں ایسا کوئی انساں نہ ملا

    یوں تو ہر راہ گزر پر تھے ستارے رقصاں

    جس کی حسرت تھی مگر وہ مہ تاباں نہ ملا

    لالہ و گل تھے بہت عام چمن میں لیکن

    ڈھونڈتے تھے جسے وہ سرو خراماں نہ ملا

    جس کے پردوں سے مچلتی ہو وہی نکہت شوق

    بے خودی کی قسم ایسا کوئی ایواں نہ ملا

    بخت بیدار کہاں جلوۂ دل دار کہاں

    خواب میں بھی ہمیں وہ غنچۂ خنداں نہ ملا

    بیکسی تشنہ لبی درد حلاوت طلبی

    چاندنی رات میں بھی چشمۂ حیواں نہ ملا

    یوں تو ہر در پہ ہی کہتے نظر آئے دامن

    کھینچتے ناز سے جس کو وہی داماں نہ ملا

    کس کے در پر نہ کیے سجدے نگاہوں نے مگر

    ہائے تقدیر وہ غارت گر ایماں نہ ملا

    کون سے بام کو رہ رہ کے نہ دیکھا لیکن

    نگہ شوق کو وہ ماہ خراماں نہ ملا

    در جاناں پہ فدا کرتے دل و جاں اخترؔ

    وائے بر‌‌ حال‌ دل و جاں در جاناں نہ ملا

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Akhtar Shirani (Pg. 212)
    • Author : Akhtar Shirani
    • مطبع : Modern Publishing House, Daryaganj New delhi (1997)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY