دل غم سے بھی بیزار ہے معلوم نہیں کیوں

کیف مرادآبادی

دل غم سے بھی بیزار ہے معلوم نہیں کیوں

کیف مرادآبادی

MORE BYکیف مرادآبادی

    دل غم سے بھی بیزار ہے معلوم نہیں کیوں

    یہ عیش بھی اب یار ہے معلوم نہیں کیوں

    عالم ہمہ دل دار ہے معلوم نہیں کیوں

    جو غم ہے غم یار ہے معلوم نہیں کیوں

    اب حسن بھی کچھ سامنے آنے میں ہے محتاط

    اب عشق بھی خوددار ہے معلوم نہیں کیوں

    وہ عشق جو ہر جلوۂ رنگیں پہ فدا ہے

    خود اپنا طلب گار ہے معلوم نہیں کیوں

    کچھ روز سے وہ کیفؔ جو اک گوشہ نشیں تھا

    رسوا سر بازار ہے معلوم نہیں کیوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے