دل گیا بے قراریاں نہ گئیں

اثر لکھنوی

دل گیا بے قراریاں نہ گئیں

اثر لکھنوی

MORE BYاثر لکھنوی

    دل گیا بے قراریاں نہ گئیں

    عشق کی خامکاریاں نہ گئیں

    مر مٹے نام پر وفا کے ہم

    تیری بے اعتباریاں نہ گئیں

    لب پہ آیا نہ اس کا نام کبھی

    غم کی پرہیز گاریاں نہ گئیں

    کھپ گئی جان بجھ گئے تیور

    اشک کی تابداریاں نہ گئیں

    توبہ کرنے کو ہم نے کی تو مگر

    توبہ کی شرمساریاں نہ گئیں

    جان آ ہی گئی لبوں پہ مگر

    شوق کی پردہ داریاں نہ گئیں

    وہ ہے کینہ کہ سرد مہری ہے

    اپنی جانب سے یاریاں نہ گئیں

    گریہ بھی ہے اثرؔ کا مستانہ

    نہ گئیں بادہ خواریاں نہ گئیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    دل گیا بے قراریاں نہ گئیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے