دل ہوا ہے مرا خراب‌ سخن

ولی محمد ولی

دل ہوا ہے مرا خراب‌ سخن

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    دل ہوا ہے مرا خراب‌ سخن

    دیکھ کر حسن بے حجاب سخن

    بزم معنی میں سر خوشی ہے اسے

    جس کوں ہے نشۂ شراب سخن

    راہ مضمون تازہ بند نہیں

    تا قیامت کھلا ہے باب سخن

    جلوہ پیرا ہو شاہد معنی

    جب زباں سوں اٹھے نقاب سخن

    گوہر اس کی نظر میں جا نہ کرے

    جن نے دیکھا ہے آب و تاب سخن

    ہرجا‌ گویاں کی بات کیونکہ سنے

    جو سنا نغمۂ رباب سخن

    ہے تری بات اے نزاکت فہم

    لوح دیباچۂ کتاب سخن

    ہے سخن جگ منیں عدیم المثال

    جز سخن نیں دجا جواب سخن

    اے ولیؔ درد سر کبھو نہ رہے

    جب ملے صندل و گلاب سخن

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Usne Chhedi (Part-1) (Pg. 45)
    • Author : Farhat Ehsas
    • مطبع : Rekhta Books (2016)
    • اشاعت : 2016

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY