دل اک نئی دنیائے معانی سے ملا ہے

اشفاق حسین

دل اک نئی دنیائے معانی سے ملا ہے

اشفاق حسین

MORE BYاشفاق حسین

    دل اک نئی دنیائے معانی سے ملا ہے

    یہ پھل بھی ہمیں نقل مکانی سے ملا ہے

    جو نام کبھی نقش تھا دل پر وہ نہیں یاد

    اب اس کا پتا یاد دہانی سے ملا ہے

    یہ درد کی دہلیز پہ سر پھوڑتی دنیا

    اس کا بھی سرا میری کہانی سے ملا ہے

    کھوئے ہوئے لوگوں کا سراغ اہل سفر کو

    جلتے ہوئے خیموں کی نشانی سے ملا ہے

    خاطر میں کسی کو بھی نہ لانے کا یہ انداز

    بپھری ہوئی موجوں کی روانی سے ملا ہے

    لفظوں میں ہر اک رنج سمونے کا قرینہ

    اس آنکھ میں ٹھہرے ہوئے پانی سے ملا ہے

    یہ صبح کی آغوش میں کھلتا ہوا منظر

    اک سلسلۂ شب کی گرانی سے ملا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    اشفاق حسین

    اشفاق حسین

    RECITATIONS

    اشفاق حسین

    اشفاق حسین

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اشفاق حسین

    دل اک نئی دنیائے معانی سے ملا ہے اشفاق حسین

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY