دل جو امیدوار ہوتا ہے

بشیر الدین راز

دل جو امیدوار ہوتا ہے

بشیر الدین راز

MORE BYبشیر الدین راز

    دل جو امیدوار ہوتا ہے

    تیر غم کا شکار ہوتا ہے

    جب ترا انتظار ہوتا ہے

    دل مرا بے قرار ہوتا ہے

    یہ ہی فصل جنوں کی ہے تمہید

    پیرہن تار تار ہوتا ہے

    آنکھ ملتے ہی اس ستم گر سے

    تیر سینے کے پار ہوتا ہے

    مسکراہٹ لبوں پہ ہے ان کے

    دل مرا اشک بار ہوتا ہے

    اس کا کرتے ہیں اعتبار کہ جو

    قابل اعتبار ہوتا ہے

    اٹھ کے پہلو سے جا رہا ہے کوئی

    کیا یہ پروردگار ہوتا ہے

    کیا بتاؤں تری جدائی میں

    جو مرا حال زار ہوتا ہے

    شام غم انتظار میں ان کے

    موت کا انتظار ہوتا ہے

    ان کے جانے کا نام سن کر رازؔ

    کچھ عجب حال زار ہوتا ہے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY