دل کے دروازے پہ دستک کی صدا کوئی نہیں

علقمہ شبلی

دل کے دروازے پہ دستک کی صدا کوئی نہیں

علقمہ شبلی

MORE BYعلقمہ شبلی

    دل کے دروازے پہ دستک کی صدا کوئی نہیں

    کون سی منزل ہے یہ آواز پا کوئی نہیں

    مجلس آلام سے کس طرح نکلے زندگی

    یہ وہ زنداں ہے کہ جس کا راستہ کوئی نہیں

    کربلا تو آج بھی ملتا ہے ہر ہر گام پر

    شہر میں لیکن حسین با وفا کوئی نہیں

    کچھ سمجھ کر ہی کیا ہے میں نے اس کا انتخاب

    کیا ہوا اس راہ میں گر نقش پا کوئی نہیں

    میں جو اٹھا تو اٹھا سارا زمانہ میرے ساتھ

    تم جو اٹھے تو اٹھا دل کے سوا کوئی نہیں

    اے شب فرقت کہاں بھٹکے گی چل میرے ہی گھر

    یہ وہ بستی ہے جہاں روشن دیا کوئی نہیں

    آتش احساس میں جلتے رہو شبلیؔ سدا

    شاعری سے بڑھ کے دنیا میں سزا کوئی نہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Be-Chehrah Lamhe (Pg. 41)
    • Author : Alqama Shibli
    • مطبع : Shaharyaar Brothers Publications (1975)
    • اشاعت : 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY