دل کے ہر درد نے اشعار میں ڈھلنا چاہا

بشر نواز

دل کے ہر درد نے اشعار میں ڈھلنا چاہا

بشر نواز

MORE BYبشر نواز

    دل کے ہر درد نے اشعار میں ڈھلنا چاہا

    اپنا پیراہن بے رنگ بدلنا چاہا

    کوئی انجانی سی طاقت تھی جو آڑے آئی

    ورنہ ہم نے تو بہر گام سنبھلنا چاہا

    چاہتے تو کسی پتھر کی طرح جی لیتے

    ہم نے خود موم کی مانند پگھلنا چاہا

    آنکھیں جلنے لگیں تپتے ہوئے بازاروں میں

    دل نے جب بھی کسی منظر پہ مچلنا چاہا

    صرف ہم ہی نہیں ہر ایک نے جینے کے لیے

    اک نہ اک جھوٹے سہارے سے بہلنا چاہا

    کون ہے یہ جو سسکتا ہے مرے سینے میں

    کون ہے جس نے مرے خون پہ پلنا چاہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY