دل کے صحرا میں بڑے زور کا بادل برسا

تاب اسلم

دل کے صحرا میں بڑے زور کا بادل برسا

تاب اسلم

MORE BYتاب اسلم

    دل کے صحرا میں بڑے زور کا بادل برسا

    اتنی شدت سے کوئی رات مجھے یاد آیا

    جس سے اک عمر رہا دعویٔ قربت مجھ کو

    ہائے اس نے نہ کبھی آنکھ اٹھا کر دیکھا

    تو مری منزل مقصود ہے لیکن ناپید

    میں تری دھن میں شب و روز بھٹکنے والا

    پھیل جاتا ترے ہونٹوں پہ تبسم کی طرح

    کاش حالات کا پہلو کبھی ہو ایسا

    کتنی شدت سے ترے عارض و لب یاد آئے

    جب سر شام افق پر کوئی تارہ چمکا

    اب کے اس طور سے آئی تھی گلستاں میں بہار

    دامن شاخ میں سوکھا ہوا پتا بھی نہ تھا

    داستاں غم کی اسے تابؔ سناتے کیوں ہو

    کب رگ سنگ سے خوں کا کبھی دھارا نکلا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے