دل کے ویرانے کو یوں آباد کر لیتے ہیں ہم

وامق جونپوری

دل کے ویرانے کو یوں آباد کر لیتے ہیں ہم

وامق جونپوری

MORE BY وامق جونپوری

    دل کے ویرانے کو یوں آباد کر لیتے ہیں ہم

    کر بھی کیا سکتے ہیں تجھ کو یاد کر لیتے ہیں ہم

    جب بزرگوں کی دعائیں ہو گئیں بیکار سب

    قرض خواب آور سے دل کو شاد کر لیتے ہیں ہم

    تلخی کام و دہن کی آبیاری کے لیے

    دعوت شیراز ابر و باد کر لیتے ہیں ہم

    دیکھ کر دھبے لہو کے دست آدم زاد پر

    طاری اپنے ذہن پر الحاد کر لیتے ہیں ہم

    کون سنتا ہے بھکاری کی صدائیں اس لیے

    کچھ ظریفانہ لطیفے یاد کر لیتے ہیں ہم

    جب پرانا لہجہ کھو دیتا ہے اپنی تازگی

    اک نئی طرز نوا ایجاد کر لیتے ہیں ہم

    دیکھ کر اہل قلم کو کشتۂ آسودگی

    خود کو وامقؔ فرض اک نقاد کر لیتے ہیں ہم

    RECITATIONS

    خالد مبشر

    خالد مبشر

    خالد مبشر

    دل کے ویرانے کو یوں آباد کر لیتے ہیں ہم خالد مبشر

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites