دل کی بساط کیا تھی نگاہ جمال میں

سیماب اکبرآبادی

دل کی بساط کیا تھی نگاہ جمال میں

سیماب اکبرآبادی

MORE BYسیماب اکبرآبادی

    دل کی بساط کیا تھی نگاہ جمال میں

    اک آئینہ تھا ٹوٹ گیا دیکھ بھال میں

    دنیا کرے تلاش نیا جام جم کوئی

    اس کی جگہ نہیں مرے جام سفال میں

    آزردہ اس قدر ہوں سراب خیال سے

    جی چاہتا ہے تم بھی نہ آؤ خیال میں

    دنیا ہے خواب حاصل دنیا خیال ہے

    انسان خواب دیکھ رہا ہے خیال میں

    اہل چمن ہمیں نہ اسیروں کا طعن دیں

    وہ خوش ہیں اپنے حال میں اہم اپنی چال میں

    سیمابؔ اجتہاد ہے حسن طلب مرا

    ترمیم چاہتا ہوں مذاق جمال میں

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 44)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY