دل کو کیا ہو گیا خدا جانے

داغؔ دہلوی

دل کو کیا ہو گیا خدا جانے

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    دل کو کیا ہو گیا خدا جانے

    کیوں ہے ایسا اداس کیا جانے

    اپنے غم میں بھی اس کو صرفہ ہے

    نہ کھلا جانے وہ نہ کھا جانے

    اس تجاہل کا کیا ٹھکانا ہے

    جان کر جو نہ مدعا جانے

    کہہ دیا میں نے راز دل اپنا

    اس کو تم جانو یا خدا جانے

    کیا غرض کیوں ادھر توجہ ہو

    حال دل آپ کی بلا جانے

    جانتے جانتے ہی جانے گا

    مجھ میں کیا ہے ابھی وہ کیا جانے

    کیا ہم اس بد گماں سے بات کریں

    جو ستائش کو بھی گلہ جانے

    تم نہ پاؤ گے سادہ دل مجھ سا

    جو تغافل کو بھی حیا جانے

    ہے عبث جرم عشق پر الزام

    جب خطاوار بھی خطا جانے

    نہیں کوتاہ دامن امید

    آگے اب دست نارسا جانے

    جو ہو اچھا ہزار اچھوں کا

    واعظ اس بت کو تو برا جانے

    کی مری قدر مثل شاہ دکن

    کسی نواب نے نہ راجا نے

    اس سے اٹھے گی کیا مصیبت عشق

    ابتدا کو جو انتہا جانے

    داغؔ سے کہہ دو اب نہ گھبراؤ

    کام اپنا بتا ہوا جانے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY