دل لے کے ہمارا جو کوئی طالب جاں ہے

محمد رفیع سودا

دل لے کے ہمارا جو کوئی طالب جاں ہے

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    دل لے کے ہمارا جو کوئی طالب جاں ہے

    ہم بھی یہ سمجھتے ہیں کہ جی ہے تو جہاں ہے

    ہر ایک کے دکھ درد کا اب ذکر و بیاں ہے

    مجھ کو بھی ہو رخصت مرے بھی منہ میں زباں ہے

    اس عشق کے ہے تو ہی سزا وار کہ ہر ایک

    دل دے کے ترے نام کو جویائے نشاں ہے

    جویندۂ ہر چیز ہے یابندہ جہاں میں

    جز عمر گزشتہ کہ وہ ڈھونڈو تو کہاں ہے

    پیری جو تو جاوے تو جوانی سے یہ کہنا

    خوش رہیو مری جان تو جیدھر ہے جہاں ہے

    پہنچا نہ کوئی مرغ کبھو اپنے چمن تک

    جز طائر حسرت کہ وہ یاں بال فشاں ہے

    تجھ سے تو کسو طرح مرا کچھ نہیں چلتا

    جز خون کہ آنکھوں سے شب و روز رواں ہے

    ساقی تو نظر کیجیو ٹک صبح چمن کو

    اس پیر کے جلوے کا بھلا کوئی جواں ہے

    سوداؔ کا ترے دشت میں طفلاں سے ہے یہ حال

    جیدھر وہ کھڑا ہووے تو جوں سنگ نشاں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY