دل مت ٹپک نظر سے کہ پایا نہ جائے گا

محمد رفیع سودا

دل مت ٹپک نظر سے کہ پایا نہ جائے گا

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    دل مت ٹپک نظر سے کہ پایا نہ جائے گا

    جوں اشک پھر زمیں سے اٹھایا نہ جائے گا

    رخصت ہے باغباں کہ تنک دیکھ لیں چمن

    جاتے ہیں واں جہاں سے پھر آیا نہ جائے گا

    آنے سے فوج خط کے نہ ہو دل کو مخلصی

    بندھوا ہے زلف کا یہ چھٹایا نہ جائے گا

    پہنچیں گے اس چمن میں نہ ہم داد کو کبھو

    جوں گل یہ چاک جیب سلایا نہ جائے گا

    تیغ جفائے یار سے دل سر نہ پھیریو

    پھر منہ وفا کو ہم سے دکھایا نہ جائے گا

    آوے گا وہ چمن میں نہ اے ابر جب تلک

    پانی گلوں کے منہ میں چوایا نہ جائے گا

    عمامے کو اتار کے پڑھیو نماز شیخ

    سجدے سے ورنہ سر کو اٹھایا نہ جائے گا

    زاہد گلے سے مستوں کے باز آنے کا نہیں

    تا مے کدے میں لا کے چھکایا نہ جائے گا

    ظالم نہ میں کہا تھا کہ اس خوں سے درگزر

    سوداؔ کا قتل ہے یہ چھپایا نہ جائے گا

    دامان و داغ تیغ کو دھویا تو کیا ہوا

    عالم کے دل سے داغ دھلایا نہ جائے گا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    شرتی سڈولکر کاٹکر

    شرتی سڈولکر کاٹکر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY