دل مطمئن ہے حرف وفا کے بغیر بھی

فضیل جعفری

دل مطمئن ہے حرف وفا کے بغیر بھی

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    دل مطمئن ہے حرف وفا کے بغیر بھی

    روشن ہے راہ نور صدا کے بغیر بھی

    اک خوف سا درختوں پہ طاری تھا رات بھر

    پتے لرز رہے تھے ہوا کے بغیر بھی

    گھر گھر وبائے حرص و ہوس ہے تو کیا ہوا

    مرتے ہیں لوگ روز وبا کے بغیر بھی

    میں ساری عمر لفظوں سے کمبل نہ بن سکا

    کٹتی ہے رات یعنی ردا کے بغیر بھی

    احساس جرم جان کا دشمن ہے جعفریؔ

    ہے جسم تار تار سزا کے بغیر بھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY