دل نے پھر چاہا اجالے کا سمندر ہونا

طفیل چترویدی

دل نے پھر چاہا اجالے کا سمندر ہونا

طفیل چترویدی

MORE BYطفیل چترویدی

    دل نے پھر چاہا اجالے کا سمندر ہونا

    پھر اماوس کو ملا میرا مقدر ہونا

    دوستو میں تو نہ مانوں گا وہ ہے خشک مزاج

    اس نے آنکھوں کو سکھایا ہے مری تر ہونا

    آج سنتے ہیں وہ مائل بہ کرم آئے گا

    اے مری روح مرے جسم کے اندر ہونا

    میرے ہونٹوں پہ جمی پیاس گواہی دے گی

    میں نے قطرہ کو سکھایا تھا سمندر ہونا

    مجھ سے اس بار ملو گے تو سمجھ جاؤ گے

    کیسا ہوتا ہے کسی شخص کا پتھر ہونا

    مأخذ :
    • کتاب : Sare waraq tumhare (Pg. 55)
    • Author : Tufail Chaturvedi
    • مطبع : National Publishing House (1994)
    • اشاعت : 1994

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY