دل و نگاہ پہ طاری رہے فسوں اس کا

اختر رضا سلیمی

دل و نگاہ پہ طاری رہے فسوں اس کا

اختر رضا سلیمی

MORE BYاختر رضا سلیمی

    دل و نگاہ پہ طاری رہے فسوں اس کا

    تمہارا ہو کے بھی ممکن ہے میں رہوں اس کا

    زمیں کی خاک تو کب کی اڑا چکے ہیں ہم

    ہماری زد میں ہے اب چرخ نیلگوں اس کا

    تجھے خبر نہیں اس بات کی ابھی شاید

    کہ تیرا ہو تو گیا ہوں مگر میں ہوں اس کا

    اب اس سے قطع تعلق میں بہتری ہے مری

    میں اپنا رہ نہیں سکتا اگر رہوں اس کا

    دل تباہ کی دھڑکن بتا رہی ہے رضاؔ

    یہیں کہیں پہ ہے وہ شہر پر سکوں اس کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY