دل پر کسی کی بات کا ایسا اثر نہ تھا

آلوک مشرا

دل پر کسی کی بات کا ایسا اثر نہ تھا

آلوک مشرا

MORE BY آلوک مشرا

    دل پر کسی کی بات کا ایسا اثر نہ تھا

    پہلے میں اس طرح سے کبھی در بدر نہ تھا

    چاروں طرف تھے دھوپ کے جنگل ہرے بھرے

    صحرا میں کوئی میرے علاوہ شجر نہ تھا

    تارے بھی شب کی جھیل میں غرقاب ہو گئے

    میری اداسیوں کا کوئی ہم سفر نہ تھا

    فرقت کی آنچ تھی نہ تری یاد کی تپش

    دل سرد پڑ رہا تھا کہیں اک شرر نہ تھا

    کل شب نہ جانے کون سے غم تھے اپھان پر

    اشکوں سے اس قدر میں کبھی تر بہ تر نہ تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY