دل پریشان ہوا جاتا ہے

داغؔ دہلوی

دل پریشان ہوا جاتا ہے

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    دل پریشان ہوا جاتا ہے

    اور سامان ہوا جاتا ہے

    خدمت پیر مغاں کر زاہد

    تو اب انسان ہوا جاتا ہے

    موت سے پہلے مجھے قتل کرو

    اس کا احسان ہوا جاتا ہے

    لذت عشق الٰہی مٹ جائے

    درد ارمان ہوا جاتا ہے

    دم ذرا لو کہ مرا دم تم پر

    ابھی قربان ہوا جاتا ہے

    گریہ کیا ضبط کروں اے ناصح

    اشک پیمان ہوا جاتا ہے

    بے وفائی سے بھی رفتہ رفتہ

    وہ مری جان ہوا جاتا ہے

    عرصۂ حشر میں وہ آ پہنچے

    صاف میدان ہوا جاتا ہے

    مدد اے ہمت دشوارپسند

    کام آسان ہوا جاتا ہے

    چھائی جاتی ہے یہ وحشت کیسی

    گھر بیابان ہوا جاتا ہے

    شکوہ سن آنکھ ملا کر ظالم

    کیوں پشیمان ہوا جاتا ہے

    آتش شوق بجھی جاتی ہے

    خاک ارمان ہوا جاتا ہے

    عذر جانے میں نہ کر اے قاصد

    تو بھی نادان ہوا جاتا ہے

    مضطرب کیوں نہ ہوں ارماں دل میں

    قید مہمان ہوا جاتا ہے

    داغؔ خاموش نہ لگ جائے نظر

    شعر دیوان ہوا جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY