دل پہ آفت آئی اب اک آن میں

قربان علی سالک بیگ

دل پہ آفت آئی اب اک آن میں

قربان علی سالک بیگ

MORE BYقربان علی سالک بیگ

    دل پہ آفت آئی اب اک آن میں

    زلف کچھ کہتی ہے اس کے کان میں

    ساتھ اس کے غیر بھی آ جائے گا

    کیوں کہ اس کافر کو لاؤں دھیان میں

    قیمت دل چاہیے بوسے کئی

    آگے جو آئے ترے ایمان میں

    ہے یہ نفرت غیر سے لائے نہیں

    رشک کا مضموں بھی ہم دیوان میں

    پوچھتا کیا ہے ہماری زندگی

    جیتے ہیں پر موت کے ارمان میں

    طور مرنے کے نہ تھے سالکؔ ترے

    ہاں مگر رکھتا ہے کیا انسان میں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY