دل قابل محبت جاناں نہیں رہا

مومن خاں مومن

دل قابل محبت جاناں نہیں رہا

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    دل قابل محبت جاناں نہیں رہا

    وہ ولولہ وہ جوش وہ طغیاں نہیں رہا

    ٹھنڈا ہے گرم جوشی افسردگی سے جی

    کیسا اثر کہ نالہ و افغاں نہیں رہا

    کرتے ہیں اپنے زخم جگر کو رفو ہم آپ

    کچھ بھی خیال جنبش مژگاں نہیں رہا

    دل سختیوں سے آئی طبیعت میں نازکی

    صبر و تحمل قلق جاں نہیں رہا

    غش ہیں کہ بے دماغ ہیں گل پیرہن نمط

    از بس دماغ عطر گریباں نہیں رہا

    آنکھیں نہ بدلیں شوخ نظر کیوں کے اب کہ میں

    مفتون لطف نرگس فتاں نہیں رہا

    ناکامیوں کا گاہ گلہ گاہ شکر ہے

    شوق وصال و اندہ ہجراں نہیں رہا

    بے تودہ تودہ خاک سبک دوش ہو گئے

    سر پر جنون عشق کا احساں نہیں رہا

    ہر لحظہ مہر جلووں سے ہیں چشم پوشیاں

    آئینہ زار دیدۂ حیراں نہیں رہا

    پھرتے ہیں کیسے پردہ نشینوں سے منہ چھپائے

    رسوا ہوئے کہ اب غم پنہاں نہیں رہا

    آسیب چشم قہر پری طلعتاں نہیں

    اے انس اک نظر کہ میں انساں نہیں رہا

    بے کاری امید سے فرصت ہے رات دن

    وہ کاروبار حسرت و حرماں نہیں رہا

    بے سیر دشت و بادیہ لگنے لگا ہے جی

    اور اس خراب گھر میں کہ ویراں نہیں رہا

    کیا تلخ کامیوں نے لب زخم سی دیئے

    وہ شور اشتیاق نمکداں نہیں رہا

    بے اعتبار ہو گئے ہم ترک عشق سے

    از بس کہ پاس وعدہ و پیماں نہیں رہا

    نیند آئی ہے فسانۂ گیسو و زلف سے

    وہم و گمان خواب پریشاں نہیں رہا

    کس کام کے رہے جو کسی سے رہا نہ کام

    سر ہے مگر غرور کا ساماں نہیں رہا

    مومنؔ یہ لاف الفت تقویٰ ہے کیوں مگر

    دلی میں کوئی دشمن ایماں نہیں رہا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    دل قابل محبت جاناں نہیں رہا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY