دل سے یا گلستاں سے آتی ہے

رئیس امروہوی

دل سے یا گلستاں سے آتی ہے

رئیس امروہوی

MORE BYرئیس امروہوی

    دل سے یا گلستاں سے آتی ہے

    تیری خوشبو کہاں سے آتی ہے

    کتنی مغرور ہے نسیم سحر

    شاید اس آستاں سے آتی ہے

    خود وہی میر کارواں تو نہیں

    بوئے خوش کارواں سے آتی ہے

    ان کے قاصد کا منتظر ہوں میں

    اے اجل! تو کہاں سے آتی ہے

    شکوہ کیسا کہ ہر بلا اے دوست!

    جانتا ہوں جہاں سے آتی ہے

    ہو چکیں آزمائشیں اتنی

    شرم اب امتحاں سے آتی ہے

    عین دیوانگی میں یاد آیا!

    عقل عشق بتاں سے آتی ہے

    تیری آواز گاہ گاہ اے دوست!

    پردۂ ساز جاں سے آتی ہے

    دل سے مت سرسری گزر کہ رئیسؔ

    یہ زمیں آسماں سے آتی ہے

    مآخذ
    • کتاب : Hikayat-e-nai (Pg. 86)
    • Author : Rais Amrohvi
    • مطبع : Rais Acadami, Garden Est. Krachi-3 (1975)
    • اشاعت : 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY