دل شکستہ ہوئے ٹوٹا ہوا پیمان بنے

شاذ تمکنت

دل شکستہ ہوئے ٹوٹا ہوا پیمان بنے

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    دل شکستہ ہوئے ٹوٹا ہوا پیمان بنے

    ہم وہی ہیں جو تمہیں دیکھ کے انجان بنے

    چند یادیں مری زنجیر شب و روز بنیں

    چند لمحے مرے کھوئے ہوئے اوسان بنے

    وہ بھی کیا فصل تھی کیا شعلۂ خرمن تھا بلند

    وہ بھی کیا دن تھے کہ دامن سے گریبان بنے

    ان کی دوری کا بھی احساں ہے مری سانسوں پر

    مجھ سے اس طرح وہ بچھڑے کہ نگہبان بنے

    اہل ساحل سے ندامت سی ندامت ہے کہ ہم

    ایک کشتیٔ تہہ آب کا سامان بنے

    ہائے کیا آس تھی کیا کیا نہ تمہیں بننا تھا

    تم بنے بھی تو مرے درد کی پہچان بنے

    گھر سجانا تو کجا شاذؔ لٹا بھی نہ سکوں

    ان سے شکوہ ہے کہ وہ کیوں مرے مہمان بنے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY