دل سوختہ کو اپنے جلایا غضب کیا

پنڈت جواہر ناتھ ساقی

دل سوختہ کو اپنے جلایا غضب کیا

پنڈت جواہر ناتھ ساقی

MORE BYپنڈت جواہر ناتھ ساقی

    دل سوختہ کو اپنے جلایا غضب کیا

    نیرنگ تم نے کیا یہ دکھایا غضب کیا

    زندہ کیا ہے حسرت مردہ کو بے وفا

    تو بعد مرگ گور پہ آیا غضب کیا

    یہ درد درد مند تماشا دکھائے گا

    آفت رسیدہ کو جو ستایا غضب کیا

    ہم خانماں خراب بھٹکتے کہاں پھریں

    بیٹھے بٹھائے اس نے اٹھایا غضب کیا

    سب کہہ رہے تھے بلبل کشمیر کے حریف

    اس گل نے اپنا یار بنایا غضب کیا

    مجذوب و مست پیر مغاں کیوں نہ وہ رہے

    ساقیؔ کو جام جذب پلایا غضب کیا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Saaqi (Pg. e-50 p-47)
    • Author : Pandit Jawahar Nath Saqi
    • مطبع : Pandit Jawahar Nath Saqi (1926)
    • اشاعت : 1926

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے