دل تو برساتا ہے ہر روز ہی غم کے ساون

اطہر عزیز

دل تو برساتا ہے ہر روز ہی غم کے ساون

اطہر عزیز

MORE BYاطہر عزیز

    دل تو برساتا ہے ہر روز ہی غم کے ساون

    پھر بھی بجھتے نہیں یادوں کے سلگتے ایندھن

    زندگی خوابوں کی چلمن میں یوں اٹھلاتی ہے

    جیسے سکھیوں میں گھری ہو کوئی شرمیلی دلہن

    اب تو ہر روز ہی اک آنچ نئی اٹھتی ہے

    یہ مرا جسم نہ بن جائے دہکتا مدفن

    اس سے پہلے کہ صبا آنکھ مچولی کھیلے

    بند کر دو در امید کا ہر ہر روزن

    شب کے آئینے میں تصویر تمنا دیکھو

    عکس دکھلائے گا کیا تم کو سحر کا درپن

    اس قدر بھی تو ستاؤ نہ بہکتے خوابو

    دل تعبیر کی رک جائے لرزتی دھڑکن

    ہے وہ وحشت کہ ہوا بھی نہیں چلتی اطہرؔ

    بن گیا کتنا بھیانک یہ وفا کا آنگن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY