دل والو کیوں دل سی دولت یوں بیکار لٹاتے ہو

حبیب جالب

دل والو کیوں دل سی دولت یوں بیکار لٹاتے ہو

حبیب جالب

MORE BYحبیب جالب

    دل والو کیوں دل سی دولت یوں بیکار لٹاتے ہو

    کیوں اس اندھیاری بستی میں پیار کی جوت جگاتے ہو

    تم ایسا نادان جہاں میں کوئی نہیں ہے کوئی نہیں

    پھر ان گلیوں میں جاتے ہو پگ پگ ٹھوکر کھاتے ہو

    سندر کلیو کومل پھولو یہ تو بتاؤ یہ تو کہو

    آخر تم میں کیا جادو ہے کیوں من میں بس جاتے ہو

    یہ موسم رم جھم کا موسم یہ برکھا یہ مست فضا

    ایسے میں آؤ تو جانیں ایسے میں کب آتے ہو

    ہم سے روٹھ کے جانے والو اتنا بھید بتا جاؤ

    کیوں نت راتو کو سپنوں میں آتے ہو من جاتے ہو

    چاند ستاروں کے جھرمٹ میں پھولوں کی مسکاہٹ میں

    تم چھپ چھپ کر ہنستے ہو تم روپ کا مان بڑھاتے ہو

    چلتے پھرتے روشن رستے تاریکی میں ڈوب گئے

    سو جاؤ اب جالبؔ تم بھی کیوں آنکھیں سلگاتے ہو

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Habib Jalib (Pg. 48)
    • Author : Habib Jalib
    • مطبع : Tahir Sons Publishers (2012)
    • اشاعت : 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے