دلبر کہا رفیق کہا چارہ گر کہا

بختیار ضیا

دلبر کہا رفیق کہا چارہ گر کہا

بختیار ضیا

MORE BY بختیار ضیا

    دلبر کہا رفیق کہا چارہ گر کہا

    جو کچھ بھی تم کو ہم نے کہا سوچ کر کہا

    وہ تم کہ ہم کو آج بھی مخلص نہ کہہ سکے

    اور ہم نے ساری عمر تمہیں معتبر کہا

    یہ رونقیں جہان کی منسوب تم سے کیں

    پھر ان تجلیوں کو حریم نظر کہا

    پرسش تری فریب تسلی تری فریب

    وہ دل کی بات تھی جسے دنیا کا ڈر کہا

    تیرے نقوش پا کو بتایا ہے کہکشاں

    تیری گلی کے ذروں کو شمس و قمر کہا

    سب مطمئن تھے دیکھ کے آزادیاں مری

    میرے ضمیر نے مجھے بے بال و پر کہا

    ان پر تو کوئی حرف نہ آنے دیا ضیاؔ

    جو گزری اس کو گردش شام و سحر کہا

    مآخذ:

    • کتاب : Shab Charagh (Pg. 57)
    • Author : Bakhtiyar Ziya
    • مطبع : Markaz-e-adab (1993)
    • اشاعت : 1993
    • کتاب : Shab Charagh (Pg. 57)
    • Author : 1993
    • مطبع : Markaz-e-adab (Bakhtiyar Ziya)
    • اشاعت : Bakhtiyar Ziya

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY