دل دار اس کو خواہ دل آزار کچھ کہو

محمد رفیع سودا

دل دار اس کو خواہ دل آزار کچھ کہو

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    دل دار اس کو خواہ دل آزار کچھ کہو

    سنتا نہیں کسو کی مرا یار کچھ کہو

    غمزہ ادا نگاہ تبسم ہے دل کا مول

    تم بھی اگر ہو اس کے خریدار کچھ کہو

    شیریں نے کوہ کن سے منگائی تھی جوئے شیر

    گر امتحاں ہے اس سے بھی دشوار کچھ کہو

    ہر آن آ مجھی کو ستاتے ہو ناصحو

    سمجھا کے تم اسے بھی تو یک بار کچھ کہو

    اے ساکنان کنج قفس صبح کو صبا

    سنتے ہیں جائے گی سوئے گلزار کچھ کہو

    عالم کی گفتگو سے تو آتی ہے بوئے خوں

    بندہ ہے اک نگہ کا گنہ گار کچھ کہو

    سوداؔ موافقت کا سبب جانتا ہے یار

    سمجھے مخالف اس کو کچھ اغیار کچھ کہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY