دوست ہے وہ پیٹھ پر آئے گا نیزہ تان کر

پرویز مظفر

دوست ہے وہ پیٹھ پر آئے گا نیزہ تان کر

پرویز مظفر

MORE BYپرویز مظفر

    دوست ہے وہ پیٹھ پر آئے گا نیزہ تان کر

    بھائی ہے تو جا مری رسوائی کا سامان کر

    ورنہ سیدھے سے ادا کر دے شرافت کا خراج

    اور آزادی کی خواہش ہے تو بڑھ اعلان کر

    تجھ کو حق تلفی کا یہ احساس کیوں ہونے لگا

    سارے اندھے بانٹتے ہیں ریوڑی پہچان کر

    آ گلے مل درد کا رشتہ ہے اپنے درمیاں

    اتنے زوروں سے نہ ہندوستان پاکستان کر

    میرے غم خانے کو جیسے تو نے جل تھل کر دیا

    مہرباں بادل کسی صحرا کو نخلستان کر

    روشنی رہتی ہے تیری شیش محلوں میں سدا

    چاند پیارے میری کٹیا پر کبھی احسان کر

    اس نے پوچھا تک نہیں پرویزؔ ہو کس حال میں

    میں تو اس کے پاس آ بیٹھا تھا اپنا جان کر

    مأخذ :
    • کتاب : اردو غزل کا مغربی دریچہ(یورپ اور امریکہ کی اردو غزل کا پہلا معتبر ترین انتخاب) (Pg. 269)
    • مطبع : کتاب سرائے بیت الحکمت لاہور کا اشاعتی ادارہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY