دوستو دل کہیں زنہار نہ آنے پائے

امداد علی بحر

دوستو دل کہیں زنہار نہ آنے پائے

امداد علی بحر

MORE BYامداد علی بحر

    دوستو دل کہیں زنہار نہ آنے پائے

    دل کے ہاتھوں کوئی آزار نہ آنے پائے

    کیجیے حسن پرستی مگر اس قید کے ساتھ

    پیاری صورت پہ ذرا پیار نہ آنے پائے

    خانۂ یار گھر آفت کا ہے اے رہ گیرو

    جسم پر سایۂ دیوار نہ آنے پائے

    اے جنوں تیرا زمانے میں رہے جب تک دور

    ہوش میں عاشق سرشار نہ آنے پائے

    آپ پر عقدۂ نازک کمری کھل جاتا

    تا کمر گیسوئے خم دار نہ آنے پائے

    چشم محبوب سے نرگس کو برابر نہ کرو

    پاس بیمار کے بیمار نہ آنے پائے

    بحرؔ کچھ غم نہ کرو دل کے جدا ہونے کا

    اب بغل میں یہ بد اطوار نہ آنے پائے

    مآخذ
    • کتاب : Ghazal Usne Chhedi(3) (Pg. 129)
    • Author : Farhat Ehsas
    • مطبع : Rekhta Books (2017)
    • اشاعت : 2017

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY