دنیا ہے یہ کسی کا نہ اس میں قصور تھا

آنند نرائن ملا

دنیا ہے یہ کسی کا نہ اس میں قصور تھا

آنند نرائن ملا

MORE BYآنند نرائن ملا

    دنیا ہے یہ کسی کا نہ اس میں قصور تھا

    دو دوستوں کا مل کے بچھڑنا ضرور تھا

    اس کے کرم پہ شک تجھے زاہد ضرور تھا

    ورنہ ترا قصور نہ کرنا قصور تھا

    تم دور جب تلک تھے تو نغمہ بھی تھا فغاں

    تم پاس آ گئے تو الم بھی سرور تھا

    اس اک نظر کے بزم میں قصے بنے ہزار

    اتنا سمجھ سکا جسے جتنا شعور تھا

    اک درس تھی کسی کی یہ فن کاری نگاہ

    کوئی نہ زد میں تھا نہ کوئی زد سے دور تھا

    بس دیکھنے ہی میں تھیں نگاہیں کسی کی تلخ

    شیریں سا اک پیام بھی بین السطور تھا

    پیتے تو ہم نے شیخ کو دیکھا نہیں مگر

    نکلا جو مے کدے سے تو چہرے پہ نور تھا

    ملاؔ کا مسجدوں میں تو ہم نے سنا نہ نام

    ذکر اس کا مے کدوں میں مگر دور دور تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دنیا ہے یہ کسی کا نہ اس میں قصور تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY