دنیا کا غم ہی کیا غم الفت کے سامنے

ارم لکھنوی

دنیا کا غم ہی کیا غم الفت کے سامنے

ارم لکھنوی

MORE BYارم لکھنوی

    دنیا کا غم ہی کیا غم الفت کے سامنے

    باطل ہے بے وجود حقیقت کے سامنے

    حسرت سے چپ ہوں میں تری صورت کے سامنے

    جیسے گناہ گار ہو جنت کے سامنے

    رسوائیاں ہزار ہوں بربادیاں ہزار

    پروا کسے ہے تیری محبت کے سامنے

    اے ناز عشق دار و رسن کی بساط کیا

    میرے وفور شوق شہادت کے سامنے

    اے حسن بے مثال مجال آئنے کی کیا

    جو آ سکے کبھی تری صورت کے سامنے

    آبادیوں کو چھوڑ کے خوش ہو گیا تھا میں

    صحرا بھی تنگ ہے مری وحشت کے سامنے

    لاکھوں حجاب حسن کو گھیرے رہیں مگر

    ٹھہرے ہیں کب نگاہ محبت کے سامنے

    کتنے پہاڑ راہ وفا میں کٹے ارمؔ

    کتنے ابھی ہیں اور مصیبت کے سامنے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ارم لکھنوی

    ارم لکھنوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY