دنیا سمجھ رہی ہے کہ پتھر اچھال آئے

منصور عثمانی

دنیا سمجھ رہی ہے کہ پتھر اچھال آئے

منصور عثمانی

MORE BYمنصور عثمانی

    دنیا سمجھ رہی ہے کہ پتھر اچھال آئے

    ہم اپنی پیاس جا کے سمندر میں ڈال آئے

    جو پھانس چبھ رہی ہے دلوں میں وہ تو نکال

    جو پاؤں میں چبھی تھی اسے ہم نکال آئے

    کچھ اس طرح سے ذکر تباہی سنائیے

    آنکھوں میں خون آئے نہ شیشے میں بال آئے

    سمجھو کہ زندگی کی وہیں شام ہو گئی

    کردار بیچنے کا جہاں بھی سوال آئے

    گزرو دیار فکر سے منصورؔ اس طرح

    خود پر زوال آئے نہ فن پر زوال آئے

    مأخذ :
    • کتاب : Kashmakash (Pg. 121)
    • Author : Mansoor Usmani
    • مطبع : Najma House, Baradari, Moradabad (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY