دشمن جاں ہے تشنۂ خوں ہے

آبرو شاہ مبارک

دشمن جاں ہے تشنۂ خوں ہے

آبرو شاہ مبارک

MORE BYآبرو شاہ مبارک

    دشمن جاں ہے تشنۂ خوں ہے

    شوخ ہے بانک ہے نکت بھوں ہے

    تجھ کوں لیلیٰ بھی دیکھ مجنوں ہے

    دل رباؤں کا دل ربا توں ہے

    دل کے چھلنے کوں یہ لٹک چلنا

    سحر ہے ٹوٹکا ہے افسوں ہے

    خال مشکیں ہے لال لب ہا پر

    یا مے سرخ بیچ افیوں ہے

    آن ہے درد کے ضعیفاں پر

    آہ دل کی الف ہے قد نوں ہے

    درگزر کر رقیب سیں اے دل

    بے حیا ہے رجالا ہے دوں ہے

    درد سر کا علاج کیوں نہ کرے

    یار کا رنگ صندلی گوں ہے

    شیخ خرقے میں جب مراقب ہو

    گربہ مسکین ہے مری جوں ہے

    گر وفادار کش نہیں وہ شوخ

    آبروؔ ساتھ دشمنی کیوں ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Deewan-e-Aabro (Pg. 246)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY