دور تا حد نظر آب شجر کچھ بھی نہیں

اسرارالحق اسرار

دور تا حد نظر آب شجر کچھ بھی نہیں

اسرارالحق اسرار

MORE BYاسرارالحق اسرار

    دور تا حد نظر آب شجر کچھ بھی نہیں

    جانے کیا کیا تھا نگاہوں میں مگر کچھ بھی نہیں

    جس کی تکمیل میں اک عمر ہوئی اپنی تمام

    وقت آیا تو وہ سامان سفر کچھ بھی نہیں

    دور تک پھیل گئی زخم چٹکنے کی صدا

    وہ بہت پاس تھا اور اس کو خبر کچھ بھی نہیں

    ہر نفس کرب کے جنگل میں بھٹکنے کے سوا

    آگہی کچھ بھی نہیں فکر و نظر کچھ بھی نہیں

    اب وہ اک پل کی مسرت ہو کہ صدیوں کا الم

    کوئی صورت ہو ان اشکوں سے مفر کچھ بھی نہیں

    رات پھر جل کے پگھل کے تو سحر تک پہنچیں

    پھر یہ دیکھیں سر دامان سحر کچھ بھی نہیں

    مآخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY