دوریوں میں قرابتوں کا مزا

محسن اسرار

دوریوں میں قرابتوں کا مزا

محسن اسرار

MORE BYمحسن اسرار

    دوریوں میں قرابتوں کا مزا

    لیجے لیجے محبتوں کا مزا

    کچھ مزا بارشوں کی شورش کا

    کچھ ٹپکتی ہوئی چھتوں کا مزا

    ہو گئی نا تباہ خود داری

    لے لیا نا رعایتوں کا مزا

    اک مہاجر ہی جان سکتا ہے

    کیسا ہوتا ہے ہجرتوں کا مزا

    دھوپ جائے قرار سایوں کی

    ہر بگولہ مسافتوں کا مزا

    بھوک اور پیاس ذات کی لذت

    فاقہ مستی قناعتوں کا مزا

    جیسے سجدے میں قتل ہو کوئی

    ایسا ہوتا ہے چاہتوں کا مزا

    موت ہے زندگی کی کمزوری

    جاں کنی اپنی قوتوں کا مزا

    عشق ہوتا ہے تب ہی جب محسنؔ

    منتقل ہو طبیعتوں کا مزا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے